اپنے اینڈرائیڈ فون کو محفوظ بنائیں

4,267

آخر کون سا ایسا صارف ہوگا جو فون اور کلاؤڈ پر اپنا ڈیٹا محفوظ نہیں بنانا چاہتا؟ آپ بھی ایسا چاہتے ہوں گے اور اپنے اینڈرائیڈ فون میں ڈیٹا کی حفاظت کو یقینی بنانا چاہتے ہیں تو باآسانی کر سکتے ہیں اور اگر آپ کی ضروریات کچھ مختلف بھی ہیں تو ایسے ادارے موجود ہیں جو گوگل، ایپل اور مائیکروسافٹ کے ساتھ مل کر سکیورٹی کو یقینی بنا رہے ہیں۔

بلاشبہ کوئی طریقہ 100 فیصد محفوظ نہیں ہوتا اور اس حفاظتی حصار کو توڑنے کی کوشش کرنے والے بھی موجود ہیں لیکن جوابی حملے کے ذریعے ان کے لگائے گئے گھاؤ پُر کرنے کے لیے اپڈیٹس بھی پیش کیے جاتے ہیں یعنی یہ ایک نہ رکنے والا سلسلہ ہے۔

یہ کہنا بالکل بھی غلط نہیں ہوگا کہ اس پورے سلسلے کی سب سے کمزور کڑی آپ ہیں، یعنی صارف۔ اگر آپ اپنے ڈیٹا کو محفوظ بنانا چاہتے ہیں تو آپ کو خود کچھ طریقے اختیار کرنا ہوں گے۔ اینڈرائیڈ فون پر سکیورٹی کو یقینی بنانے کےلیے کچھ قدم باآسانی اٹھائے جا سکتے ہیں جو آپ کے ڈیٹا تک کسی کی بھی رسائی کو دشوار بنا سکتے ہیں۔ جیسا کہ:

ایک محفوظ لاک اسکرین کا انتخاب

ایک محفوظ لاک اسکرین کا انتخاب آپ کے فون یا کلاؤڈ پر ڈیٹا تک رسائی محدود کرنے کا آسان ترین طریقہ ہے۔ چاہے آپ فون اپنی میز پرچھوڑ جائیں یا پھر آپ کا فون کھو جائے یا چوری ہو جائے تب بھی، ایک لاک اسکرین کو دھوکا دینا آسان نہیں۔ یوں آپ کا ڈیٹا محفوظ رہتا ہے۔

یہ بھی کہا جا سکتا ہے کہ کوئی بھی ایسا طریقہ جو آپ کے فون کو لاک کردے، وہ کہیں بہتر ہے ایک کھلے فون سے۔ چھ ہندسوں کا پن بھی کافی ہے، زیادہ لمبا الفاظ و ہندسوں کا پاس ورڈ بھی، گو کہ بار بار پاس ورڈ لکھناآپ کے اپنے کے لیے دردِ سر بن سکتا ہے۔ اس کا ایک متبادل پیٹرن بھی ہے جو پاکستان میں خاصا مقبول طریقہ ہے۔ تو جو بھی طریقہ ہو، اسےاختیار کریں اور کم از کم اس حد تک تو اپنے فون کو محفوظ رکھیں۔


انکرپشن اور 2 فیکٹر آتھنٹی کیشن

اپنے تمام لوکل ڈیٹا کو انکرپٹ (encrypt) کریں اور ٹو-فیکٹر آتھنٹی کیشن (two-factor authentication) کے ذریعے اپنے اکاؤنٹ لاگ اِنز کا ڈیٹا بھی محفوظ کریں۔ اینڈرائیڈ کے جدید ورژنز میں ڈیفالٹ میں ہی ڈیٹا انکرپٹ ہوتا ہے۔اینڈرائیڈ 7 میں تیز تر رسائی اور کنٹرول کے لیے فائل سطح پر انکرپشن موجود ہے۔ آن لائن اکاؤنٹس کو ایک مضبوط پاس ورڈ اور ٹو-فیکٹر آتھنٹی کیشن کی ضرورت ہوتی ہے۔ مختلف ویب سائٹس پر ایک ہی پاس ورڈ استعمال نہ کریں اور یاد رکھنے کے لیے پاس ورڈ مینیجر کا استعمال کریں۔


احتیاط، سب سے بہتر

کوئی بھی لنک یا کسی کی ایسے شخص کا پیغام جسے آپ نہ جانتے ہوں،اس پر کلک نہ کریں۔جس پر اعتماد نہ ہو اس کے بھیجے گئے کسی لنک پر بھی کلک مت کریں۔ جیسا کہ آپ کسی ٹیلی وژن چینل پر اعتماد کرتے ہیں تو اس کے فیس بک یا ٹوئٹر اکاؤنٹ پر بھیجے گئے کسی لنک پر کلک کیجیے لیکن جس پر یقین نہیں، اس پر کبھی مت کریں۔ اس کی وجہ بے اعتمادی نہیں بلکہ ان لنکس کے ذریعے آپ کے ڈیٹا تک رسائی کا خطرہ ہے۔ کئی ایسے لنکس کے ذریعے مالویئر اینڈرائیڈ فونز میں داخل ہو جاتے ہیں اور بلکہ آئی فون بھی محفوظ نہیں۔


صرف بااعتماد ایپلی کیشنز انسٹال کریں

صرف ان ذرائع سے کوئی ایپ انسٹال کریں جو قابل اعتماد ہوں، جیسا کہ گوگل پلے سے۔ اگر کوئی ایپ انسٹال کرنے کا لنک آپ کو ملتا ہے جوپلے اسٹور سے باہر کا ہے تو اسے ہرگز استعمال مت کریں۔ اگر پھر بھی آپ کوئی ایسی ایپ انسٹال کرنا چاہتے ہیں تو اس کے ذرائع پر اعتماد کی بھی ضرورت ہوگی۔ مالویئر یا دیگر چیزیں اسی وقت سافٹویئر میں داخل ہوتی ہیں جب آپ اسے اجازت دیتے ہیں۔ پھر بھی 100 فیصد حفاظت نہیں ملتی، اس لیے گوگل پلے سے بھی ان ایپس کو انسٹال کریں جن کی ریٹنگ اچھی ہو۔