چور سولر پاورڈ سڑک کا ٹکڑا لے اڑے

828

سڑک پر سولر پینلز لگانا اور اس سے توانائی حاصل کرنا اب اِتنا اچھوتا خیال بھی نہیں رہا، لیکن اس سے کچھ عجیب چیلنجز بھی سامنے آ رہے ہیں۔ مثال کے طور پر چوری کا خطرہ! جی ہاں، ایسا ایک حیران کن واقعہ چین میں پیش آیا ہے، وہ بھی دنیا کی پہلی سولر پینل ہائی وے بنانے کے صرف پانچ دن بعد۔

ایک کلومیٹر طویل ایک تجرباتی شاہراہ چینی شہر شانڈونگ میں واقع ہے جس پر 10 ہزار سولر پینلز لگائے گئے ہیں۔ اس کا بالائی حصہ مکمل طور پر شفاف ہے اور 3 سینٹی میٹر سے بھی کم موٹائی رکھتا ہے۔ اس میں کوائلز بھی نصب ہیں جو چلنے والی الیکٹرک کاروں کو چارج کر سکتے ہیں اور برف باری کی صورت میں کام آتے ہیں۔ اسے 28 دسمبر کو عوام کے لیے کھولا گیا تھا لیکن ۔۔۔ صرف پانچ دن بعد، 2 جنوری کی صبح کو جب عملے نے سڑک کا معائنہ کیا تو پایا کہ ایک چھوٹا سا حصہ غائب ہے جسے بڑی صفائی سے کاٹا گیا ہے۔ 6 انچ چوڑا اور 6 فٹ لمبا یہ ٹکڑا نہ ہی ٹوٹا تھا، نہ کی کسی خرابی کی وجہ سے نکالا گیا تھا بلکہ اسے کسی نے چوری کیا تھا۔

ایک عہدیدار کا کہنا ہے کہ اس حصے کی مرمت پر ہزاروں ڈالرز لاگت آئے گی لیکن ساتھ ہی کئی سوالات بھی پیدا ہوئے ہیں، اگر کسی کی نظریں تھیں تو سڑک کھلنے سے پہلے ایساکیوں نہیں کیا گیا؟ اگر نقصان پہنچانا ہی ہدف تھا تو اپنا چھوٹا ٹکڑا کیوں کاٹا گیا؟ کسی بڑے حصے کو نقصان کیوں نہیں پہنچایا گیا؟ اور سب سے اہم بات کہ آخر چوری کرنے والا اس ٹکڑے کا کرے گا کیا؟

بہرحال، حکام کا کہنا ہے کہ یہ کسی پروفیشنل ٹیم کی حرکت ہے۔ ویسے کہیں ایسا تو نہیں کہ کوئی دوسری کمپنی اس کے پسِ پردہ ٹیکنالوجی سمجھنا چاہتی ہو اور ایسی ہی لیکن ایک سستی پروڈکٹ مارکیٹ میں لانے کی خواہشمند ہو؟ اللہ جانتا ہے حقیقت کیا ہے؟ ویسے سڑک کو مرمت کے بعد کھول دیا گیا ہے اور پولیس تحقیقات کر رہی ہے۔ دیکھتے ہیں کون پکڑا جاتا ہے؟