کرپٹو کرنسی مارکیٹ کے لیے بدترین خبر

1,138

ایک ایسے وقت میں جب مارکیٹ تیزی سے گر رہی ہے، کرپٹو کرنسی کے لیے ایک بہت بری خبر فیس بک کی طرف سے بھی آئی ہے جس نے بٹ کوائن سمیت کسی بھی کرپٹو کرنسی کو ترویج دینے والے اشتہارات پر پابندی لگا دی ہے۔ فیس بک انہیں ایسی "مالیاتی مصنوعات اور خدمات قرار دیتا ہے جو گمراہ کن اور مغالطے میں ڈالنے کی کوششوں سے منسلک ہیں۔”

اس کا مطلب ہے کہ کوئی بھی اشتہار، چاہے وہ قانونی کاروبار ہی کیوں نہ کر رہا ہوں- بٹ کوائن اور دیگر کرنسیوں کی فیس بک پر ترویج نہیں کر سکتا۔ یعنی اب ہماری نام نہاد "کرپٹو جینیئس” جیمز آلٹوچر سے بھی جان چھوٹ جائے گی جن کے اشتہارات نے انٹرنیٹ پر ہماری ناک میں دم کیا ہوا تھا۔

ایسے اشتہارات جو فیس بک کی نئی پالیسی کی خلاف ورزی کرتے ہیں، نہ صرف بنیادی ایپ میں بلکہ جہاں فیس بک اشتہارات فروخت کرتا ہے وہاں بھی نہیں لگائے جائیں گے جیسا کہ انسٹاگرام اور اس کے اشتہاری نیٹ ورک میں۔

فیس بک کے ایڈ ٹیک ڈائریکٹرز میں سے ایک راب لیدرن نے لکھا ہے کہ گمراہ کن اشتہارات کو سمجھنے اور روکنے کے لیے یہ پالیسی وسیع پیمانے پر اپنائی جا رہی ہے۔ ہم اس پر نظر ثانی کریں گے لیکن حالات کو بہتر بنانے کے بعد۔

ایک ایسے وقت میں جب مارکیٹ میں تیزی سے زوال آ رہا ہے، یہ خبر کرپٹو کرنسی رکھنے والوں پر بجلی بن کر گری ہوگی۔ لگتا ہے 2017ء میں جو بلبلہ بنا تھا، وہ اب پھٹنے کے قریب ہے کیونکہ چند ماہ سے کرپٹو کرنسی مارکیٹ کے لیے کوئی اچھی خبر نہیں آئی ہے۔ ویسے حیرت کی بات یہ ہے کہ خود فیس بک کے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں دو ایسے افراد شامل ہیں جن کے ادارے کرپٹو کرنسی کی پشت پناہی کرتے ہیں۔ فیس بک میسنجر کے باس ڈیوڈ مارکوس ایک معروف کرپٹو ایکسچینج کوائن بیس کے بورڈ میں شامل ہیں۔