ڈرون منصوبے میں شرکت، گوگل ملازمین نے استعفے دے دیے

2,967

تقریبا ایک درجن گوگل ملازمین نے امریکی محکمہ دفاع پینٹاگون کے لیے ڈرون پروگرام "پروجیکٹ میون” (Project Maven) میں شامل ہونے پر عہدے سے استعفے دے دیے ہیں۔ یہی نہیں بلکہ تقریباً 4 ہزار ملازمین نے پروجیکٹ میں تعاون کے خاتمے کا مطالبہ کیا ہے اور ساتھ ہی کہا ہے کہ گوگل مستقبل میں کسی بھی عسکری منصوبے میں ہاتھ نہ بٹانے کا عہد کرے۔

پروجیکٹ میون مشین لرننگ کے ذریعے ڈرون کی فوٹیج کا زیادہ تیزی سے تجزیہ کرنے میں مدد دینے کے لیے شروع کیا گیا ہے۔ گوگل سے استعفیٰ دینے والے ملازمین کا کہنا ہے کہ ڈرون آپریشنز میں مصنوعی ذہانت کے استعمال پر انہیں تحفظات ہیں اور وہ معاملے کے اخلاقی پہلوؤں کو ملحوظ رکھتے ہوئے اور سیاسی و عسکری شعبوں میں کمپنی کی وسیع پیمانے پر شمولیت پر عہدہ چھوڑ رہے ہیں۔ ایک ملازم نے کہا کہ میں ادارے میں اپنے خدشات کا اظہار کرنے پر خوش نہیں تھا۔ اس لیے بہتر یہی تھا کہ میں استعفیٰ دے دیتا۔

اس منصوبے کے خلاف گوگل میں عرصے سے آوازیں اٹھ رہی ہیں۔ ایک ماہ قبل تقریباً 3100 ملازمین نے ایک پٹیشن پر دستخط کیے تھے۔ اب تک کل افرادی قوت کا 5 اعشاریہ 4 فیصد اپنے خدشات ظاہر کرچکا ہے لیکن گوگل اب بھی پروجیکٹ میون میں پیشرفت کررہا ہے۔

ملازمین کا کہنا ہے کہ میون میں شمولیت گوگل کی بنیادی اخلاقیات کے خلاف ہے جبکہ گوگل کہتا ہے کہ مصنوعی ذہانت جنگی آپریشنز میں استعمال نہیں کی جائے گی، لیکن اس کے باوجود بڑے پیمانے پر اس فیصلے پر ناپسندیدگی کا اظہار کیا گیا۔