ہیکرز نے بینکوں کے اے ٹی ایم خالی کردیئے

4,545

سائبر مجرموں نےایک بھارتی بینک کے کریڈٹ کارڈ پیمنٹ سسٹم کو ہیک کرکے دنیا کے 28 ممالک میں نصب اے ٹی ایم سے ڈیڑھ ارب پاکستانی روپوں کے لگ بھگ رقم چرا لی ہے۔

اطلاعات کے مطابق ہیکروں نے بھارتی شہر پونے کے Cosmos بینک کے کریڈٹ کارڈ پیمنٹ سسٹم کو ایک مال ویئر سے متاثر کیا جس کے بعد انہیں بینک کے صارفین کے کھاتوں تک رسائی اور ٹرانزیکشنز کی اجازت دینے کی صلاحیت حاصل ہوگئی۔ اس کے بعد ہیکرز نے جعلی کریڈٹ کارڈز کے ذریعے دنیا بھر پھیلے اے ٹی ایمز سے نقد رقم نکالنا شروع کی حتیٰ کہ اے ٹی ایم خالی ہوگئے ۔

امریکی فیڈر ل بیورو آف انویسٹی گیشن (FBI) کی گزشتہ ہفتے ہی دنیا بھر کے بینکوں کو خبردار کیا تھا کہ اگلے کچھ دنوں میں اے ٹی ایمز پر سائبر حملے کا امکان ہے۔ یہ وارننگ خاص طور پر ان بینکوں کو دی گئی تھی جن کے کاروبار دنیا بھر میں پھیلے ہوئے ہیں۔ ایف بی آئی کے مطابق انہیں ایسی خفیہ اطلاعات ملی ہیں کہ جرائم پیشہ شخص انتہائی مہارت اور چالاکی سے ATM Jackpotting کرنے والے ہیں۔ اے ٹی ایم جیک پوٹنگ کی اصطلاح بینک کے پیمنٹ سسٹم کو ہیک کرنے اور کریڈٹ یا ڈیبٹ کارڈز کے کاپیاں بنا کر چند ہی منٹوں میں دنیا بھر میں پھیلی اے ٹی ایمز سے کروڑوں یا اربوں روپے رقم نکالنے کو کہا جاتا ہے۔

ماہرین کا خیال ہے کہ اس حملے کے پیچھے Lazarus نامی گروہ کا ہاتھ ہے جو ماضی میں بھی ایسی کاروائیاں کرچکا ہے۔ تاہم اس گروہ کے کسی ممبر نے ابھی تک ذمے داری قبول نہیں کی۔ کچھ ماہرین کا خیال ہے کہ اس حملے کو انجام دینے کے لیے جو وسائل درکار ہیں، وہ کسی حکومت کی حمایت کے بغیر حاصل کرنا مشکل ہیں۔

بعض بینک ابھی تک پرانے آپریٹنگ سسٹم پر منحصر پیمنٹ پروسینگ سسٹم اور اے ٹی ایم استعمال کررہے ہیں۔ اس کی وجہ سے انہیں ہیک کرنا ہیکروں کے لیے آسان ہوتا ہے۔

Is mazmoon ko Roman Urdu main parhny kay leye yahan click kejeye