کہیں آپ کے کمپیوٹر سے بٹ کوائن کی خفیہ کان کنی تو نہیں کی جارہی؟

2,274

آن لائن کرنسیوں خصوصاً بٹ کوائن کی قیمتوں میں ہوشربا اضافے کے بعد کرپٹوکرنسی کی کان کنی mining بھی ایک کاروبار کا درجہ اختیار کر گئی ہے۔ اس کان کنی کے لیے طاقتور کمپیوٹنگ وسائل کا ہونا ضروری ہے۔ ہیکرز نے اس کا حل یہ نکالا کہ دنیا بھر میں پھیلے مختلف کمپیوٹرز کو غیرقانونی طور پر کان کنی کے لیے استعمال کرنے لگے۔ اس عمل کے لیے کرپٹو جیکنگ کی اصطلاح بھی استعمال کی جاتی ہے۔

کسی اور شخص کے کمپیوٹر کو اس کے علم میں لائے بغیر غیر قانونی کان کنی کرنے کے لیے ہیکرز عموماً دو طریقہ ہائے کار استعمال کرتے ہیں۔ ایک تو یہ کہ مشہور ویب سائٹس کے سرورز پر کان کنی کا اسکرپٹ کوڈ لگا دیا جاتا ہے۔ اس لیے جتنی دیر تک کوئی صارف اس ویب سائٹ کو استعمال کرتا ہے اتنی دیر اس کا کمپیٹر پس پردہ ہیکر کے لیے کرپٹوکرنسی کی کان کنی کرتا رہتا ہے۔ دوسرے طریقہ میں ایک مخصوص میل وئیر کمپیوٹر پر نصب ہو جاتا ہے۔ اور صارف کے کمپیوٹر پراسیسر کو بٹ کوائن بنانے کے لیے استعمال کرتا ہے۔

اگر آپ اپنے کمپیوٹر یا لیپ ٹاپ میں کوئی بھاری پروگرام یا بڑی گیم وغیرہ نہیں کھیل رہے۔ اس کے باوجود آپ کا سسٹم بہت سست رفتاری کا مظاہرہ کر رہا ہے، عمومی درجہ حرارت سے زیادہ گرم ہو رہا ہے یا پراسیسر پر موجود پنکھے کی رفتار غیرمعمولی حد تک تیز ہے تو اس کا مطلب ہے کہ آپ کے پاس موجود کمپیوٹنگ طاقت کو کوئی اور شخص کرپٹو کرنسی کی کان کنی کے لیے استعمال کر رہا ہے۔

میک صارفین اپنے کمپیوٹر میں Activity Monitor پر جا کر اوپر بنے زوم والے عدسے پر کلک کر کے پراسیسر کی سرگرمیوں کو تفصیل سے دیکھ سکتے ہیں۔ جبکہ ونڈوز پی سی استعمال کرنے والے Ctrl + Alt +Del کیز کو اکٹھا دبائیں۔ نتیجتاً ٹاسک مینیجر ظاہر ہو گا۔ دونوں مینیوز کی صورت میں آپ کو ایک گراف نظر آئے گا۔ جس پر پراسیسر کی طاقت کے استعمال کو وقت کے گراف پر دکھایا اور مسلسل اپڈیٹ کیا جا رہا ہو گا۔

اس گراف میں سرخ لکیر کو عبور کرنے والے تمام پروگرامز دیکھیں۔ یہاں آپ کو باآسانی وہ میل وئیر نظر آ جائے گا جو مسلسل آپ کے کمپیوٹر کو کان کنی کے لیے استعمال کر رہا ہو گا۔ اس پروگرام کو آپ ساتھ موجود چلتے پروگراموں کی ترتیب وار فہرست میں بھی دیکھ سکتے ہیں۔ آپ یہاں پر اس پروگرام کو بند کر سکتے ہیں۔

یہاں اس بات کا خیال رہے کہ آپ کو آپریٹنگ نظام کی جانب سے پس منظر میں چلائے جانے والے پروگراموں کی خبر ہونی چاہیے۔ بصورت دیگر میل وئیر کی بجائے کسی ایسے پروگرام کو بند کرنے سے آپریٹنگ نظام میں بہت بڑی خرابیاں پیدا ہو سکتی ہیں۔