پینٹاگان نے ہوواوے اور زیڈ ٹی ای اسمارٹ فونز کی فروخت پر پابندی لگا دی

1,301

لگتا ہے کہ مندی کے باوجود اسمارٹ فون مارکیٹ میں نمایاں کارکردگی دکھانے والی ہوواوے کمپنی کے لیے امریکی مارکیٹ کے دروازے دن بدن بند ہوتے جا رہے ہیں۔ کیونکہ ہوواوے امریکی اور چینی حکومتوں کے درمیان جاری تجارتی جنگ کے سب سے بڑے متاثرین میں شامل ہے۔ اب اس معاملے میں امریکی محکمہ دفاع نے بھی ہوواوے کے خلاف کمر کس لی ہے۔ اور ہوواوے کے فونز کی فروخت پر پابندی کا مطالبہ کر دیا ہے۔

امریکی خبر رساں ادارے سی این این کی جانب سے نشر ہونے والی رپورٹ کے مطابق پینٹاگان نے چینی کمپنیوں ہوواوے اور زیڈ ٹی ای کے اسمارٹ فونز کو حفاظتی خطرہ (سیکیورٹی رسک) قرار دیتے ہوئے ان کی فروخت پر پابندی کا مطالبہ کیا ہے۔ جبکہ ملک بھر میں دفاعی تنصیبات کے اردگرد موجود اسٹورز پر ان دونوں کمپنیوں کے اسمارٹ فونز کی فروخت پر پہلے ہی مکمل طور پر پابندی لگا دی گئی ہے۔

امریکی محکمہ دفاع و پینٹاگان کے ترجمان میجر ڈیوو ایسٹ برن کا کہنا ہے کہ "ہم فی الحال یہ نہیں بتا سکتے کہ ان اسمارٹ فونز سے کس طرح کے حفاظتی خطرات لاحق ہو سکتے ہیں۔ تاہم یہ واضح ہے کہ ان آلات کی مدد سے محکمہ کی اہم شخصیات کی ذاتی اور دیگر مہمات کی اندرونی معلومات کو چرایا جا سکتا ہے”.

اس قدم کے ردعمل میں ہوواوے نے بیان جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ "ہوواوے دنیا بھر کے 170 سے زائد ممالک میں اپنے آلات فروخت کر رہا ہے۔ اور تمام ممالک بشمول امریکہ کے، کے حفاظتی انتظامات اور مقامی پالیسیوں کو مدنظر رکھتے ہوئے ہی ان آلات کی ترسیل کی جاتی ہے۔ اس لیے یہ بات خارج از امکان ہے کہ ہوواوے کے تیار کردہ آلات سے کسی کی معلومات کو خطرات لاحق ہو سکتے ہیں”

زیڈ ٹی ای نے فی الحال اس ضمن میں اپنا بیان جاری کرنے سے گریز کیا ہے۔