جنوبی کوریا کے بٹ کوائن ایکسچینج کا دیوالیہ نکل گیا

1,555

آجکل ہر طرف بٹ کوائن کا چرچا ہے۔ امریکا کے ایوانوں سے لے کر پاکستان کے گلی کوچوں تک میں جس کو انٹرنیٹ کا علم ہے، اس نے کم از کم اس کرپٹو کرنسی کے بارے میں سن ضرور رکھا ہے لیکن… بٹ کوائن کی یہی شہرت اس کے حامل افراد کے لیے پریشانی کا سبب بھی بن رہی ہے، خاص طور پر بٹ کوائن ایکسچینجز کے لیے۔ کوریا کے بٹ کوائن ایکسچینج Youbit ہیکرز کے حملے میں اپنے 17 فیصد اثاثہ جات کھو بیٹھی ہے اور اب ادارہ دیوالیہ ہونے کا اعلان کرنے والا ہے۔

دارالحکومت سیول میں قائم یہ ایکسچینج یپیان چلاتا ہے جس کے خلاف یہ آٹھ ماہ میں ہونے والی دوسری کارروائی ہے۔ کمپنی کا کہنا ہے کہ ہیکرز بٹ کوائن اور ایتھریم جیسے اثاثہ جات کو محفوظ کرنے کے لیے بنائے گئے آن لائن اکاؤنٹس میں گھسے تھے۔ یوبٹ کا کہنا ہے کہ اس کے آف لائن اثاثہ جات تاحال محفوظ ہیں ۔

گو کہ یوبٹ ایک چھوٹا ایکسچینج ہے لیکن یہ واقعہ ایسے اداروں کی مشکلات کو ظاہر کرتا ہے جو اپنے ڈجیٹل اثاثوں کو ہیکرز سے محفوظ کرنے کی کوششوں میں لگے ہوئے ہیں۔ اسی مہینے سلووینیا میں ایک کرپٹوکرنسی مائننگ سروس نائس ہیش سے70 ملین ڈالرز مالیت کے بٹ کوائن چرائے گئے تھے۔

اس بڑھتے ہوئے خطرات کے باوجود کرپٹو کرنسی کے لیے جنوبی کوریا ایک بڑا میدان ہے۔ اس وقت ہر روز دنیا بھر میں بٹ کوائن کی جتنی ٹریڈنگ ہوتی ہے اس کا 15سے 25 فیصد کوریا میں ہوتا ہے لیکن اب یہاں قائم ایکسچینجز کو ہیکنگ کا خطرہ لاحق ہے جس کے بارے میں کہا جا رہا ہے کہ اس میں شمالی کوریا کا ہاتھ ہے۔

بہرحال، جنوبی کوریا کی انٹرنیٹ اینڈ سکیورٹی ایجنسی نے معاملے کی تحقیقات شروع کردی ہیں۔ دیکھتے ہیں معاملہ کہاں تک پہنچتا ہے؟